جوڈیشل کمیشن کے سامنے حاضر ہونے کیلئےتیارہوں:عمرعبداللہ

وزیراعلیٰ عمر عبداللہ نے نیشنل کانفرنس کارکن کی مبینہ حراستی ہلاکت کے سلسلے میں حزب اختلاف کی سب سے بڑی جماعت پیپلز ڈیموکریٹک پارٹی کے الزامات کو مسترد کر تے ہوئے کہا کہ پی ڈی پی صدر محبوبہ مفتی پر ہتک عزت کا دعویٰ کرنے کا اعلان کیا ۔انہوں نے کہا کہ وہ اپنی پارٹی کارکن سید محمد یوسف کی ہلاکت کے سلسلے میں جوڈیشل کمیشن کے سامنے حاضر ہونے کیلئے تیار ہیں۔واضح رہے کہ محمد یوسف کی موت چند روز قبل پولیس حراست میں واقع ہوگئی تھی۔وزیر اعلیٰ نے اس ہلاکت کے بارے میں ان پر اور انکے والد ودیگر ساتھیوں پر لگائے جانے والے الزامات کو بے بنیاد قرار دیتے ہوئے کہا کہ اسکے بارے میں جوڈیشل انکوائری کا انتظار کیا جائے کیونکہ تحقیقات کے بعد ہی’’دودھ کا دودھ اور پانی کا پانی‘‘ہوجائے گا ۔
سوموار کو اسمبلی کارروائی کے اختتام کے بعد وزیر اعلیٰ عمر عبداللہ نے ایک ہنگامی نیوز کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ سید محمد یوسف کی ہلاکت کا واقعہ ایک بدقسمتی ہے اور اس سے زیادہ بدقسمتی یہ ہے کہ اس واقعہ کے بارے میں حقائق کو مسخ کرکے توڑ مروڑ کر پیش کیا گیا۔وزیر اعلیٰ نے بتایا کہ معاملے کی سنگین اور مجرمانہ نوعیت کو بھانپتے ہوئے انہوں نے معاملے کا سنجیدہ نوٹس لیا اور نہ صرف امور داخلہ کے وزیر مملکت کو بھی وہاں موجود رہنے کیلئے کہا بلکہ یہ معاملہ پولیس کی کرائم برانچ کو سونپ دیا تاکہ اس کی مکمل تحقیقات عمل میں لاکر حقائق کو منظر عام پر لایا جائے۔انہوں نے بتایا’’حقیت یہ ہے کہ میری پارٹی کے دو ورکر میرے پاس آئے اور ایک تیسرے ورکر پر سنگین نوعیت کے الزامات عائد کئے ، معاملے کی نزاکت کو دیکھتے ہوئے اور اسکی شفاف چھان بین کے مفاد میں ، میں نے تینوں ورکروں کو اپنے پاس بلایا ‘‘۔وزیر اعلیٰ نے اس بات پر افسوس کا اظہار کیا کہ اس واقعہ کے بارے میں میڈیا میں بھی قیاس آرائیوں سے کام لیا گیا ۔تاہم ان کا کہنا تھا’’میں نے معاملے کا سنجیدہ نوٹس سنجیدہ نوٹس لیا اور اس شخص کے خلاف تحقیقات کا حکم دیا جو نیشنل کانفرنس سے تعلق رکھتا ہے ‘‘۔ وزیر اعلیٰ نے مزید کہا’’اس معاملے پر یہ تاثر دینے کی کوشش کی گئی کہ میں ، میرے والد اور میرے ساتھی کورپشن میں ملوث ہیں ، یہاں تک کہ مجھے قتل میں بھی ملوث ٹھہرانے کی کوشش کی گئی‘‘۔عمر عبداللہ نے کہا کہ معاملے کی حساسیت کو مد نظر رکھتے ہوئے انہوں نے اسکی جوڈیشل انکوائری کے احکامات صادر کئے اور ریاستی ہائی کورٹ کے چیف جسٹس سے استدعا کی کہ وہ اس کی چھان بین کے لئے ہائی کورٹ کے کسی موجودہ جج کو مامور کریں۔ان کا کہنا تھا’’اگر اس میں ہمارے پاس کچھ چھپانے کے لئے ہوتا تو ہم نے ہائی کورٹ جج کے ہاتھوں تحقیقات کا حکم نہیں دیا ہوتا، میں نے وزیر اعلیٰ کی حیثیت سے ذمہ داری کا احساس کرتے ہوئے معاملہ کرائم برانچ کو سونپا اور اسکی جوڈیشل تحقیقات کے احکامات صادر کئے،حالانکہ اس کا کسی نے مطالبہ نہیں کیا، بجائے اس کے کہ ہمارے اس اقدام کی سراہنا کی جاتی، الٹا ہم پر ہی الزامات لگائے جارہے ہیں‘‘۔وزیر اعلیٰ نے افسوس کا اظہارکرتے ہوئے سوالیہ انداز میں پوچھا’’پوسٹ مارٹم کی ابتدائی رپورٹ موصول ہونے کے بغیر ہی میڈیا اور بعض سیاسی پارٹیاں اس نتیجے پر کیسے پہنچ گئیں کہ سید محمد یوسف کا ٹارچر کیا گیا؟‘‘وزیر اعلیٰ نے بتایا ’’ میری خاموشی کو میرے خلاف استعمال کرنے کی کوشش کی گئی اور میں اس پر بات کرنے پر مجبور ہوگیا، میں نے صفائی نہیں دی اسلئے میں گنہگار ہوگیا؟‘‘ وزیر اعلیٰ نے یہ بات زور دیکر کہی’’ میں جوڈیشل انکوائری میں مکمل یقین رکھتا ہوں اور اس بات کا بے صبری سے انتظار کررہا ہوں کہ جوڈیشل کمیشن کا اپنا کام مکمل کرکے حقائق منظر عام پر لائے، مجھے اس بات میں بھی کوئی حرج نہیں ہے کہ میں کمیشن کے سامنے حاضر ہوجاؤں اور انکے سوالات کا جواب دوں‘‘۔سیدمحمد یوسف کی ہلاکت کے سلسلے میں پی ڈی پی صدر محبوبہ مفتی کی طرف سے سید محمد یوسف کی ہلاکت کے بارے میں وزیر اعلیٰ، نیشنل کانفرنس صدر ڈاکٹر فاروق عبداللہ اور انکے دیگر ساتھیوں پر عائد کئے گئے الزامات کے تعلق سے عمر عبداللہ نے کہا ’’اپوزیشن کی سب سے بڑی جماعت کی صدر نے مجھ پر، میرے والد ڈاکٹر فاروق عبداللہ اور میرے دیگر ساتھیوں پر سنگین نوعیت کے الزامات لگائے ہیں ، میں اس پر رد عمل ظاہر نہیں کروں گا، نہ پریس کے ذریعے اور نہ ذاتی طور، میں اس معاملے پر ہتک عزت کیس کے سلسلے میں اپنے وکلاء کے ساتھ مشورہ کررہا ہوں اور وہی اس پر ردعمل کا اظہار کریں گے‘‘۔وزیر اعلیٰ نے آخرپر یہ بات دہرائی کہ وہ سید محمد یوسف کی ہلاکت کے معاملے پر تب تک کسی سوال کا جواب نہیں دیں گے ، جب تک نہ اس معاملے کی جوڈیشل انکوائری مکمل ہوتی ہے۔انہوں نے کہا کہ ریاست کے چیف جسٹس بہت جلد بیرون ریاست سے لوٹ آئیں گے جس کے بعد معاملے کی چھان بین شروع کی جائے گی۔

28 Responses to جوڈیشل کمیشن کے سامنے حاضر ہونے کیلئےتیارہوں:عمرعبداللہ

  1. I do not even know how I ended up here, but I thought this post was good. I don’t know who you are but definitely you are going to a famous blogger if you aren’t already 😉 Cheers

  2. forum نے کہا:

    Hi there, just became aware of your blog through Google, and found that it is truly informative. I am gonna watch out for brussels. I will be grateful if you continue this in future. A lot of people will be benefited from your writing. Cheers!

  3. verchromen real gold نے کہا:

    Hello there, You have done an incredible job. I will definitely digg it and personally suggest to my friends. I’m confident they will be benefited from this site.

  4. Hi. wanted to let you know I really enjoyed reading your blog. Do you have Facebook? Maybe we could be friends.

  5. rüya tabiri نے کہا:

    Heya i’m for the first time here. I found this board and I find It truly useful & it helped me out much. I hope to give something back and help others like you aided me.

  6. kozmetik life نے کہا:

    This is really interesting, You are a very skilled blogger. I have joined your rss feed and look forward to seeking more of your great post. Also, I have shared your website in my social networks!

  7. masaj نے کہا:

    Hello There. I found your blog using msn. This is a really well written article. I will make sure to bookmark it and come back to read more of your useful info. Thanks for the post. I’ll definitely comeback.

  8. kartvizit نے کہا:

    Pretty nice post. I just stumbled upon your blog and wished to say that I’ve really enjoyed surfing around your blog posts. In any case I’ll be subscribing to your feed and I hope you write again soon!

  9. diziizle نے کہا:

    Wonderful beat ! I wish to apprentice while you amend your site, how can I subscribe for a blog website? The account helped me a acceptable deal. I had been tiny bit acquainted of this your broadcast offered bright clear concept

  10. oto lastik نے کہا:

    It is appropriate time to make some plans for the future and it is time to be happy. I’ve read this post and if I could I want to suggest you some interesting things or tips. Perhaps you could write next articles referring to this article. I want to read more things about it!

  11. istanbul escort نے کہا:

    You really make it seem so easy with your presentation but I find this topic to be really something that I think I would never understand. It seems too complex and very broad for me. I am looking forward for your next post, I will try to get the hang of it!

  12. Its like you read my mind! You seem to know a lot about this, like you wrote the book in it or something. I think that you can do with a few pics to drive the message home a little bit, but other than that, this is excellent blog. A fantastic read. I’ll certainly be back.

  13. Macys Coupons نے کہا:

    Pretty section of content. I just stumbled upon your website and in accession capital to assert that I get in fact enjoyed account your blog posts. Any way I’ll be subscribing to your feeds and even I achievement you access consistently quickly.

  14. iki kişilik oyunlar نے کہا:

    Magnificent goods from you, man. I’ve understand your stuff previous to and you are just extremely magnificent. I really like what you’ve acquired here, really like what you are stating and the way in which you say it. You make it entertaining and you still take care of to keep it wise. I can’t wait to read much more from you. This is actually a wonderful web site.

  15. güncel blog نے کہا:

    I was recommended this website by my cousin. I’m not sure whether this post is written by him as no one else know such detailed about my trouble. You’re amazing! Thanks!

  16. şişme bebekler نے کہا:

    I like the valuable information you provide in your articles. I will bookmark your blog and check again here regularly. I’m quite certain I will learn plenty of new stuff right here! Best of luck for the next!

  17. hd film izle نے کہا:

    I am extremely impressed with your writing skills and also with the layout on your weblog. Is this a paid theme or did you modify it yourself? Either way keep up the excellent quality writing, it is rare to see a great blog like this one today..

  18. Shayne Sherman نے کہا:

    I really appreciate this post. I’ve been looking everywhere for this! Thank goodness I found it on Bing. You have made my day! Thanks again!

  19. whatman filter paper نے کہا:

    I’d have to check with you here. Which isn’t something I normally do! I get pleasure from studying a publish that may make individuals think. Additionally, thanks for permitting me to comment!

  20. çorlu firma نے کہا:

    We are a group of volunteers and opening a new scheme in our community. Your web site provided us with valuable information to work on. You’ve done an impressive job and our whole community will be thankful to you.

  21. tv yayın akışı نے کہا:

    This is really interesting, You’re a very skilled blogger. I have joined your feed and look forward to seeking more of your wonderful post. Also, I have shared your web site in my social networks!

  22. online alışveriş نے کہا:

    Thank you for the auspicious writeup. It in fact was a amusement account it. Look advanced to far added agreeable from you! However, how can we communicate?

  23. extraction thimble نے کہا:

    I read so many poorly written articles with dull content on this topic that I was pleasantly surprised by yours. It’s great to know there’s at least one writer that writes interesting and unique material.

  24. paper نے کہا:

    Happy to be visiting your blog again, it has been weeks for me. Well, this is the article that I’ve been waited for so long. Thanks,

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: