بی ایس این ایل موبائل سروس صارفین کیلئے دردِ سر

Bsnlحالیہ تباہ کن سیلاب کے ایک ماہ بعد بھی وادی کشمیر کا مواصلاتی نظام تقریباً ابھی مفلوج ہے۔ایک طرف سیلاب کی مار اور دوسری طرف موبائل فون سروس فراہم کرنے والی کمپنیوں نے عوام کا جینا دوبھر کردیا ہے۔جموں و کشمیر میں موبائل فون یا لینڈلائن فون پر سب سے زیادہ آمدنی حاصل کرنے والی کمپنیوں میں بھارت سنچار نگم لمیٹڈ(بی ایس این ایل)سرفہرست ہے۔اس کمپنی نے سیلاب کی شدت کے دوران ہی یہ دعویٰ کیا تھا کہ بہت جلد صارفین کو تمام سہولیات دستیاب ہونگی ۔وادی بھر سے شکایات مل رہی ہیں کہ بی ایس این ایل کا دعویٰ سراب ہی ثابت ہورہا ہے۔کہیں براڈبینڈ سہولیات کا فقدان تو کہیں لینڈ لائن سروس ٹھپ اور،3Gتو ناپید ہی ہے۔موبائل سروس کا حال یہ ہے کہ ایک فون کال کرنے کیلئے کئی بار کوشش کرنی پڑتی ہے اور اگراچانک فون لگ گیا تواچانک منقطع بھی ہو جاتا ہے ۔اِس طرح بات تو مکمل نہیں ہوتی ہے البتہ صارف کے اکاؤنٹ سے پیسے ضرور کٹ جاتے ہیں۔بی ایس این ایل کی اس ناقص سروس سے پریشان صارفین کا کہنا ہے کہ وہ دوسری پرائیویٹ کمپنیوں کی سروس حاصل کرنے کیلئے مجبور ہوگئے ہیں۔فیاض احمد وانی نامی ایک ایڈوکیٹ کا کہنا ہے’’ ایسا محسوس ہورہا ہے کہ سیلاب نے شائد بی ایس این ایل کو ہی اپنی لپیٹ میں لے لیا تھا‘‘۔ فیاض نے مزید کہا’’یہ ایک الگ کہانی ہے کہ پرائیویٹ کمپنیاں بھی ہمیں مختلف طریقوں سے لوٹ رہی ہیں لیکن سیلاب کی تباہی کے بعد سروس تو فراہم کررہی ہیں‘‘ ۔ ایڈوکیٹ وانی کے مطابق بی ایس این ایل تھری جی سروس تو بالکل ہی بیکار ہے۔انہوں نے کہا’’آج کے اس تکنیکی دور میں ہر کوئی چاہتا ہے کہ انٹرنیٹ سے استفادہ کرلے ۔میں 3Gسروس کی بدولت موبائل پر ہی اب اخبار پڑھ لیا کرتا تھا لیکن جب انہوں نے یہ سروس بھی بحال نہیں کی تو میں نے ایک پرائیویٹ کمپنی کی سہولیات حاصل کیں اور بی ایس این ایل نمبر پر 3Gبند کروادیا‘‘۔لالچوک کے ایک نوجوان تاجر اعجاز احمد نے کہا ’’سیلاب سے قبل جس فون کال کیلئے آپ کو ایک روپیہ کا خرچہ آجاتا تھا ،آج اُس کیلئے کم سے کم ڈھائی سے 3روپے خرچ ہوتے ہیں ۔ سلام کا جواب سننے سے پہلے ہی فون کٹ جاتا ہے اور اکثر اوقات بات پوری کرنے کیلئے دو تین بار فون ملانا پڑتا ہے ‘‘۔ اعجاز نے مزید کہا ’’سمجھ میں نہیں آتا ہے کہ اتنی بڑی کمپنی کے باوجود یہ سیٹالائٹ خدمات حاصل کیوں نہیں کررہے ہیں ‘‘۔اس سلسلے میں جنرل منیجر بی ایس این ایل ڈی کے اگروال کا کہنا ہے کہ رواں ماہ کی 21تاریخ تک اُن علاقوں میں براڈبینڈ سسٹم صحیح ہوگا جہاں لینڈلائن فون کام کررہے ہیں ۔موبائل سروس کے بارے میں ڈی جی ایم نے کہا کہ یکم نومبر سے موبائل صارفین کو شکایات کا موقع نہیں ملے گا۔انہوں نے کہا ’’سیلاب کی وجہ سے ہماری مشینری تباہ ہوگئی تھی لیکن اب ہم نیا سسٹم نصب کررہے ہیں جس میں تھوڑا وقت لگ سکتا ہے‘‘۔

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: