لیڈن چرارشریف میں المناک واقعہ،16افراد زندہ دفن

??????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????????سیلابی صورتحال کے بیچ وسطی ضلع بڈگام کے چرار شریف قصبے سے9 کلومیٹر دور واقع ایک دور افتاد گاؤں لیڈن میں ایک پہاڑی کھسکنے اور زمین ڈھ جانے کے نتیجے میں زمین بوس ہوئے 3رہائشی مکانات میں موجودخواتین اور بچوں سمیت16افراد کے لقمہ اجل ہونے کا خدشہ ہے تاہم آخری اطلاع ملنے تک صرف 6 لاشیں ہی برآمد ہوئی تھیں جن میں 4خواتین اور22روز کا ایک نو زائد بچہ بھی شامل ہے۔اس حادثہ میں ڈیڑھ درجن کے قریب مویشی بھی ہلاک ہوگئے ہیں۔موسلا دھار بارشوں کے نتیجے میں اس بستی کے حجام محلہ میں زمین ڈھ جانے کا یہ عمل اتوار اور پیر کی درمانی رات کوشروع ہوگیا۔بچاؤ کارروائیوں میں مقامی لوگوں کے ساتھ ساتھ پولیس، فوج اور سی آر پی ایف کے سینکڑوں اہلکار مصروف ہیں لیکن وقت گزرنے کے ساتھ ملبے کے نیچے دبے افراد کے زندہ ہونے کی امیدیں دم توڑ رہی ہیں۔

اتوار اور پیر کی درمیانی شب بستی کی زمین کھسکنے لگی اور اسی کے ساتھ نزدیکی پہاڑی سے مٹی کے تودے اور چٹانیں گر آنے کا سلسلہ شروع ہوا،جس کے نتیجے میں تین رہائشی مکان زمین بوس ہوگئے ہیں جن میں موجود 16 افراد ان مکانوں کے ملبے تلے زندہ دب گئے۔ان 16افراد میں عورتیں ، بچے اور مرد شامل تھے۔ مقامی لوگوں کے مطابق اتوار شام دیر گئے بستی کے لوگ بار بار پسیاں اور زمین دھنس جانے کے خطرے کے پیش نظر محفوظ مقامات کی طرف کوچ کرنے لگے تو اس دوران لال الدین حجام نے محلے میں سب سے محفوظ تصور کرنے والے اپنے چچیرے بھائی غلام بنی حجام کے گھر اپنے پانچ افرادِ خانہ کو منتقل کر دیا کیونکہ وہاں زمین دھنس نہیں رہی تھی۔لال الدین خود اپنے گھر میں اکیلے ہی رہ گیا۔ مقامی لوگوں نے بتایا کہ مذکورہ مکان کے پیچھے ایک چھوٹی پہاڑی تھی جو سوموار کی صبح تین بجے کھسک گئی اور غلام بنی حجام کا مکان مٹی کے ایک بہت بڑے ٹیلے کے نیچے دب گیا۔مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ مکان میں موجود 16افراد موجود تھے،جن کے ہلاک ہونے کا خدشہ ظاہر کیا جارہا تاہم شام گئے تک صرف 6 افراد کی لاشیں برآمد ہوئی تھیں جن میں سے 4خواتین اور22روز کا ایک نو زائد بچہ بھی شامل ہے۔اس سانحہ میں ان دو کنبوں کے ایک فرد لال الدین حجام واحد شخص ہے جومعجزاتی طور بچ نکلا۔ مکان کے ملبے تلے لال الدین حجام کا بیٹا محمد شعبان حجام ، بیٹیاں نسیمہ اور شمیزہ ، محمد شعبان کی بہو رخسانہ اور بیٹا محمد اسلم جبکہ غلام بنی حجام اسکی پانچ بیٹیاں نسیمہ ، شادا ، شگفتہ ، فریدہ ، بسمہ ، تین بیٹے بلال احمد ، اقبال احمد اور محمد فیصل زندہ دب گئے۔ کئی گھنٹوں کی مسلسل جدوجہد کے بعد بچاؤ اہلکار تباہ شدہ مکانوں کے ملبے سے شام گئے تک جو 6 لاشیں برآمد کی گئی تھیں ،اُن کی شناخت شمیزہ بانو دختر لال دین حجام،اس کا بھائی محمد شعبان حجام ، محمد شعبان کی بہورخصانہ اور اس کا بیٹا محمد اسلم ، نسیمہ بانو و شگفتہ بانو دختران غلام نبی ہوگئی ہے ۔ملبے تلے دبے دیگر تمام افراد کے جاں بحق ہونے کا خدشہ ظاہر کیا جارہا ہے تاہم سینکڑوں اہلکار بچاؤ کارروائی جاری رکھے ہوئے ہیں۔اس واقعہ میں بشیر احمد حجام اور علی محمد حجام نامی دو دیگر شہریوں کے مکانات بھی تباہ ہوگئے، تاہم ان میں موجود افراد خانہ بال بال بچ گئے۔غلام نبی حجام نامی شہری کے مکان کے ساتھ ساتھ دو گاؤ خانے بھی مکمل طور تباہ ہوگئے جس کے نتیجے میں ان میں موجود15سے زائد مویشیوں کے ہلاک ہونے کی اطلاع بھی ہے۔صورتحال کی سنگینی کا اندازہ اس بات سے لگایا جاسکتا ہے کہ زمین بوس ہونے والے رہائشی مکانات کی چھتیں تک نظر نہیں آرہی تھیں۔جن شہریوں کے مکانات مکمل طور زمین بوس ہوگئے، ان میں غلام نبی حجام، محمد عبداللہ حجام اور لال دین حجام شامل ہیں۔ محمد عبداللہ کے گھر آئے شوپیان کے تین مہمان بھی شامل ہیں اور یہ سبھی افراد ملبے تلے زندہ دفن ہوگئے۔ضلع تر قیاتی کمشنر بڈگام میر الطاف احمد اور ایس ایس پی بڈگام فیاض احمد لون کی سربراہی میں پولیس ، ایس ڈی آر ایف ، فوج اور مقامی لوگوں کی مدد سے ملبے تلے دبے ہوئے افراد کو نکالنے کی کوششیں جاری ہیں۔(بشکریہ مقامی رپورٹر ایم اے ڈار)

 

Advertisements

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: