لشکر اسلامی کی سرگرمیاں غیر اسلامی:گیلانی

Syed-Ali-Shah-Geelaniحریت کانفرنس (گ) کے چیئرمین سید علی گیلانی نے جہاد کونسل سربراہ سے اپیل کی ہے کہ لشکر اسلام نامی تنظیم کا پتہ لگائیں۔انہوں نے کہا کہ داعش ، تحریک طالبان (پاکستان) کے بعد اب کشمیرمیں یہ تنظیم بے گناہ افراد کو قتل کرکے اسلام کو بدنام کر رہی ہے۔ گیلانی نے پاکستان کو اپنا محسن ملک قرار دیتے ہوئے کہا کہ کشمیری عوام پاکستانی پرچم لہرانے سے باز نہیں آئیں گے بلکہ مستقبل میں بھی ریلیوں میں اِس پرچم کو لہرایا جاتا رہے گا۔حریت چیئرمین اپنی حیدر پورہ رہائش گاہ پرمختلف مزاحمتی ، مذہبی اور تجارتی انجمنوں کے علاوہ سیول سوسائٹی سے وابستہ نمائندوں کے ایک مشاورتی اجلاس سے خطاب کررہے تھے۔گیلانی نے حالیہ ایام میں مواصلاتی نظام اور اس سے جڑے افراد پر حملوں کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے جہاد کونسل سربراہ سید صلاح الدین سے اپیل کی کہ وہ پتہ لگائیں کہ یہ ’لشکر اسلام ‘کیا ہے اور یہ کون لوگ ہیں جو بے گناہ افراد کو قتل کررہے ہیں۔سید علی گیلانی نے اپنے صدارتی خطاب میں کہا’’جہاد کونسل کو اس گروپ کے بارے میں پتہ لگانا چاہئے کیونکہیہ گروپ اسلام مخالف سرگرمیوں میں ملوث ہے۔یہ تحریک کو بدنام کررہے ہیں اور اْن لیڈران کو دھمکیاں دے رہے ہیں کہ جو شہداء کی تعزیتی تقاریب میں شرکت کررہے ہیں‘‘۔انہوں نے کہا ’ جہاد کونسل کو چاہئے کہ وہ لشکر اسلام کے سلسلے میں لوگوں کو باخبرکریں کہ یہ جماعت جنگجو گروپ ہے یا نہیں‘‘۔ گیلانی کے مطابق داعش ، تحریک طالبان پاکستان اور اب لشکر اسلام جیسی تنظیمیں اسلام کے نام کو بدنام کررہی ہیں اور ان کی کارروائیوں کا اسلام کے ساتھ دور کا بھی تعلق نہیں ہے۔ گیلانی نے کشمیر میں پاکستانی پرچم لہرانے کے معاملے پر ہندوستانی لیڈران کے بیانات مسترد کرتے ہوئے کہا کہ کشمیر میں پاکستانی پرچم 1947سے لہرایا جاتا رہا ہے اور آگے بھی لہرایا جاتا رہے گا۔انہوں نے کہا ’ ’پاکستان کشمیریوں کا محسن ہے، یہاں کے لوگ پاکستان کے ساتھ محبت کرتے ہیں اور اس کو زور زبردستی سے ختم نہیں کیا جاسکتا ہے‘‘۔سید علی گیلانی نے اپنے صدارتی خطاب میں کہا کہ بھاریہ جنتا پارٹی ہندوستان کو ’ ہندتوا ‘ کے رنگ میں رنگنا چاہتی ہے۔انہوں نے کہا کہ بی جے پی آر ایس ایس ایجنڈے کو عملی جامہ پہنانے کے لئے سرکاری مشینری کا بے دریغ استعمال کررہی ہے اور وہ ’ گھر واپسی ‘ اور ’ بیٹی بچاؤ،بہو لاؤ ‘ جیسے نعروں کے تحت تمام اقلیتوں کے جان ومال ، عزت اور مذہب پر جارحانہ طریقے سے حملہ آور ہونا چاہتی ہے۔گیلانی نے کہا ’’ کشمیر کے حوالے سے بی جے پی حکومت کے عزائم انتہائی خطرناک ہیں اور وہ اس متنازعہ ریاست میں مسلم اکثریت کو اقلیت میں تبدیل کرنے، ہماری دینی اور تہذیبی شناخت کو ختم کرنے کے اپنے منصوبے کو عملی جامہ پہنانا چاہتی ہے‘‘۔ گیلانی نے مزید کہا ’’فرقہ پرست عناصر ریاست کی ڈیموگرافی تبدیل کرنے اور یہاں کے لوگوں کی مسلم شناخت کو ختم کرنے کے ایک جارحانہ منصوبے کو عملی جامہ پہنانا چاہتی ہے اور اس سلسلے میں صوبہ جموں پہلا ٹارگیٹ بنایا گیا ہے‘‘۔حریت چیئرمین کا کہنا تھا کہ پوری کشمیری قوم ان عزائم کو ناکام بنانے کے لئے مستعد ہے اور وہ اِن کے اس ایجنڈے کی بھرپور مزاحمت کریں گے۔گیلانی کے مطابق اس سلسلے میں ایک کونٹر اسٹریٹجی ترتیب دی جائے گی جس کو ہر محاذ اور ہر سطح پر عملایا جائے گا۔ مشاورتی اجلاس کے آخر میں اتفاق رائے سے ایک قرارداد پاس کی گئی جس میں عالمی برادری سے اپیل کی گئی کہ وہ تنازعہ کشمیر کا عوام کی خواہشات اور قربانیوں کے مطابق حل نکالنے میں مدد کرے اور بھارت پر دباؤ ڈالے کہ وہ اقوامِ متحدہ کے چارٹر پر موجود ان 8قراردادوں کا نفاذ عمل میں لانے میں تعاون کرے، جو ہندوپاک کے مابین ایک بین الاقوامی معاہدے کی حیثیت رکھتی ہیں اور جن کی پاسداری دونوں ممالک پر لازم ہے۔ قرارداد میں کہا گیا کہ کوئی بھی کشمیری پنڈتوں کی واپسی کا مخالف نہیں ہے البتہ ان کے لیے الگ ٹاؤن شپ قائم کرنا کشمیر کو مذہب کے نام پر تقسیم کرنے کی ایک کوشش ہے اور اس کی کسی بھی صورت میں اجازت نہیں دی جائے گی۔رفیوجیوں کو اسٹیٹ سبجیکٹ فراہم کرانے کی مخالفت کرتے ہوئے قراردادمیں کہا گیا کہ رفیوجیوں کو بھارت کی کسی اورریاست میں بسایا جانا چاہئے۔ قرارداد میں ’ گھر واپسی ‘ اور ’ بیٹی بچاؤ،بہو لاؤ ‘ جیسے نعروں کو مسترد کرتے ہوئے کہا گیا کہ’ کشمیری قوم بھارت کی تہذیبی جارحیت کا مقابلہ کرنے کے لیے تمام اختلافات کو پس پشت ڈال کر متحد ہے اور ہم ہرقیمت پر اپنی دینی شناخت اور اسلامی کلچر کی حفاظت کریں گے‘۔

Advertisements

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: