پاک بھارت مذاکرات لاحاصل عمل:گیلانی

بلدیاتی انتخابات کا مکمل بائیکاٹ کرنے کی اپیل کرتے ہوئے حریت کانفرنس(گ) چیئرمین سید علی گیلانی نے کہا کہ نئی دلی انتخابات میں کشمیریوں کی شرکت کو اپنے حق میں ریفرنڈم قرار د ے رہا ہے جس کے نتیجے میں آزادی کی منزل طویل ہوجاتی ہے۔ حریت چیئرمین نے پاک بھارت مذاکرات کو ایک لاحاصل عمل قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ بھارت ایک طرف مسائل حل کرنے کی بات کرتا ہے اور دوسری طرف کشمیر کو بھارت کا اٹوٹ انگ قرار دیکر اپنی ہٹ دھرمی کا احساس دلاتا ہے۔ گیلانی نے نیشنل کانفرنس کو کشمیریوں کی غلامی کیلئے سب سے زیادہ ذمہ دار قرار دیتے ہوئے کہا ’’ہماری غلامی کی بنیاد اس وقت پڑی جب 1938 میں نیشنل کانفرنس کومعرض وجود میں لایا گیا اوراین سی کے بانی مرحوم شیخ محمد عبداللہ نے کانگریس کے ساتھ دوستی بڑھائی۔ پی ڈی پی کو ہدفِ تنقید بناتے ہوئے گیلانی نے کہا کہ ہندوستان کے قبضے کو دوام بخشنے والی سبھی جماعتیں ایک ہی تھالی کے چٹے بٹے ہیں ۔گیلانی اپنی رہائش گاہ واقع حیدرپورہ میں ’’مسئلہ کشمیر کی اساس۔۔۔اقوام متحدہ کی قراردادیں‘‘ کے عنوان پر منگل کو ایک سمینار سے خطاب کررہے تھے۔ سید علی گیلانی نے کہا کہ ہندوستان قانونی اور اخلاقی طور اقوام متحدہ کی قراردادوں کولاگو کرنے کیلئے پابند ہے کیونکہ انہوں نے اقوام متحدہ میں ان قراردادوں پر دستخط کئے ہیں۔گیلانی کے مطابق پنڈت جواہر لال نہرو نے سرینگر کے لالچوک میں اور بھارتی پارلیمنٹ میں وعدے کئے ہیں کہ کشمیریوں کے ساتھ کسی قسم کی زبردستی نہیں کی جائے گی اور ریاست میں اقوامِ متحدہ کی قراردادوں کا نفاذ عمل میں لاکر رائے شماری کی جائے گی لیکن بعد اذاں وہ اپنے وعدوں سے مکر گئے۔حریت سربراہ کے مطابق اتنا ہی نہیں بلکہ ہندوستان نے ان لوگوں کو بھی بھروسے کے قابل نہیں سمجھا، جنہوں نے اس کو کشمیر پر قبضہ کرنے کی شہہ دی تھی۔سید علی گیلانی نے پاک بھارت کے مابین حالیہ مذاکرات کو ایک لاحاصل عمل قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ بھارت ایک طرف مسائل حل کرنے کی بات کرتا ہے اور دوسری سانس میں کشمیر کو بھارت کا اٹوٹ انگ قرار دیتا ہے۔گیلانی کے مطابق اس سے یہ بات واضح ہوجاتی ہے کہ بھارت اپنی ضد پر قائم ہے ۔انہوں نے کہا کہ اس ہٹ دھرمی سے نہ ماضی میں کچھ حاصل کیا جاسکا ہے اور نہ مستقبل میں اس کا کوئی نتیجہ نکلنے والا ہے۔ گیلانی کے مطابق بھارت محض وقت گزاری کیلئے بات چیت کا ڈھونگ رچاتا ہے ورنہ مسئلہ حل کرنے میں اسے کوئی دلچسپی نہیں ہے۔ انہوں نے کہا ’’موجودہ صورتحال میں ہمیں نئی دلی کی سازشوں اورمنصوبوں کو سمجھنے کی اشد ضرورت ہے کیونکہ بھارت ہمارے ووٹ کو بین الاقوامی فورموں پر اپنے فوجی قبضے کو جواز بخشنے اور رائے شماری کا متبادل قرار دینے کی کوشش کرتا ہے‘‘۔انہوں نے مزید کہا’’ لوگوں کا ووٹ ڈالنا نہ صرف رواں جدوجہد میں دی گئی قربانیوں کی توہین ہے بلکہ اس طرح ہماری آزادی کی منزل طویل ہوجاتی ہے‘‘۔گیلانی نے نیشنل کانفرنس کو کشمیریوں کی غلامی کیلئے سب سے زیادہ ذمہ دار قرار دیتے ہوئے کہا ’’ہماری غلامی کی بنیاد اس وقت پڑی جب 1938 میں نیشنل کانفرنس کومعرض وجود میں لایا گیا اوراین سی کے بانی مرحوم شیخ محمد عبداللہ نے پنڈت جواہر لال نہرو کے ساتھ دوستی بڑھائی، جنہوں نے کشمیریوں کو دھوکہ دیا‘‘۔گیلانی نے اس صورتحال میں عوام کو بھی مورد الزام ٹھہراتے ہوئے کہا ’’عوام نے اس وقت اصول پرستی کے بجائے شخص پرستی کو اپنایا اور موقف تبدیل کرنے پر بھی اس وقت کی قیادت کو نہیں ٹوکا۔ وہ پانی کے بہاؤ پر بہتے رہے اور ہواؤں کے رُخ پرخس وخاشاک کی طرح اڑتے رہے‘‘۔ گیلانی کے مطابق لوگوں نے کبھی نیشنل کانفرنس قیادت سے جواب نہیں مانگا کہ ان کی محاذ رائے شماری تحریک کا کیا ہوا ؟ حریت رہنما نے پی ڈی پی کو ہدفِ تنقید بناتے ہوئے کہا’’یہ جماعت این سی سے بھی بدتر ثابت ہوئی‘‘۔ سید علی گیلانی نے کہا ’’ اس جماعت نے تبدیلی کے نام پر ووٹ مانگا تھالیکن ہم نے عوام کو خبردار کیا تھا کہ بھارت کے فوجی قبضے کے موجود ہوتے ہوئے کوئی تبدیلی آنے والی نہیں ہے اور آج آپ دیکھ رہے ہیں کہ قتل وغارت گری، گرفتاریوں، تلاشیوں اور نظربندیوں کا سلسلہ برابر جاری ہے اور پوری ریاست کو ایک جیل خانے میں تبدیل کردیا گیاہے۔ انسانی حقوق کی پامالیوں کا سلسلہ دراز ہوتا جارہا ہے‘‘۔ واضح رہے کہ اس سمینارمیں لوگوں کی ایک بڑی تعداد نے شرکت کی اور دفتر کا ہال کھچاکھچ بھرا تھا حالانکہ حریت (گ) نے اس سلسلے میں کوئی تشہیر نہیں کی تھی۔

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: