بیشتر نوجوانوں کے کولہوں اور ٹانگوں میں گولیاں پیوست

MIXحزب کمانڈر برہان مظفر وانی کی ہلاکت کے بعد بھڑک اٹھنے والی تشدد کی لہر میں جہاں 34 افراد جاں بحق ہوگئے ہیں وہیں سینکڑوں افراد گولیاں اور پیلٹ لگنے سے زخمی ہوگئے ہیں، جن میں سے کئی ایک کی حالت اسپتالوں میں تشویشناک بنی ہوئی ہے۔ ہڈیوں اور جوڑوں کے ہسپتال برزلہ میں 30زخمی نوجوان فی الوقت زیر علاج ہیں جن میں ایک18سالہ دوشیزہ بھی شامل ہے۔اکثرزخمیوں کے کولہوں میں گولیاں لگی ہیں جبکہ کچھ زخمیوں کی ٹانگوں اور کندھوں میں بھی گولیاں لگی ہیں۔الفت جان دختر غلام محمد گنائی ساکن پنجرن پلوامہ کے کولہے میں گولی لگی ہے اور وہ ہسپتال کے وارڈ نمبر15میں بیڈ نمبر21پر زیر علاج ہے۔الفت نے کہا کہ کسی احتجاج میں شامل نہیں تھی بلکہ سنیچر کو5بجے کے قریب اپنے گھر کے گیٹ کے باہراپنی سہیلی کے ساتھ باتیں کررہی تھی کہ اچانک وہاں سے پولیس کی ایک گاڑی نمودار ہوئی اور اُس میں موجود ایک اہلکار نے ہم پر راست فائر کئے ۔انہوں نے کہا ’’ایک گولی میرے کولہے پر لگی اور میں وہیں گرپڑی‘‘۔انہوں نے مزید کہا ’’میں اُس اہلکار کو اچھی طرح پہچانتی ہوں ،وہ پولیس چوکی لاسی پورہ میں تعینات ہے‘‘۔ہسپتال کے ہی وارڈ نمبر5میں بیڈ نمبر47پر 17سالہ محمدعامرچوپان ولد بشیر احمد ساکن وائل گڈول کوکرناگ زیر علاج ہے۔اُس کے کندھے میں جمعہ کی شام کو ہی گولی لگی ہے ۔واضح رہے کہ اسی دن برہان اپنے دو ساتھیوں سمیت جاں بحق ہوا۔درد سے کراہتے ہوئے عامر نے کہا ’’ہم ایک بہت بڑے احتجاجی جلوس میں آگے بڑھ رہے تھے کہ فورسز نے مظاہرین کو روکنے کیلئے کسی ٹئیرگیس شیل کا استعمال نہیں کیا بلکہ راست فائرنگ کی‘‘۔وارڈ نمبر 5میں ہی 18سالہ اشفاق احمد ولد عبدالغنی بھی زیر علاج ہے جس کی بائیں ٹانگ میں گولی لگی ہے جبکہ 25سالہ میر مظفر ولد نثار احمد ساکن ڈاڈہ سر ترال کی بائیں بازو میں گولی لگی ہے۔وہ وارڈ نمبر 4میں زیرعلاج ہے۔مظفر نے کہا کہ وہ سنیچر کی شام اُس وقت گولی کگنے سے زخمی ہوا جب پولیس اور فورسز نے مظاہرین پر اندھا دھند فائرنگ کی۔انہوں نے کہا کہ آو دیکھا نہ تاؤ کے مصداق فورسز نے مظاہرین کو منتشر کرنے کیلئے پیلٹ ،ٹئیرگیس شیلنگ اور فائرنگ کا زبردست استعمال کیا۔یہ بات قابل ذکر ہے کہ بیشتر زخمی نوجوانوں کی عمر 15سے 25 سال کے قریب ہے۔ میڈیکل سپرانٹنڈنٹ ڈاکٹر عبدالرشید بڈو کے مطابق بیشتر زخمیوں کی بازؤں اور کولہوں اور ٹانگوں میں گولیاں لگی ہیں۔انہوں نے کہا کہ ہسپتال میں 50زخمیوں کو داخل کیا گیا تھا جن میں سے 20کو رخصت کیا گیا اور 30ہنوز زیر علاج ہیں۔

Advertisements

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: